• 12 اگست, 2020

ساری رات

’’ان کو شکوہ ہے کہ ہجر مىں کىوں تڑپاىا سارى رات
جن کى خاطر رات لُٹا دى چىن نہ پاىا سارى رات‘‘

(ىہ شعر حضرت خلىفۃ المسىح الرابعؒ کا ہے)

…………………………………………………………………………

اُس سے شکوہ کون کرے کہ کىوں تڑپائے سارى رات
جو پىتم خود ہجر کے دُکھ سے چىن نہ پائے سارى رات
جگ والو! کىا چاہت کا ىہ رُوپ بھى تم نے دىکھا ہے
پرىمى سُکھ سے سوئىں پى کو نىند نہ آئے سارى رات
مُجھ مورکھ کى اکھىئن مىں تو پانى کى اک بُوند نہىں
من موہن نے مىرى خاطر، نىر بہائے سارى رات
نِر بھاگى جو ہىں وہ سب تو لمبى تانے سوتے ہىں
بَھاگوں والا رو رو ان کے بھاگ جگائے سارى رات
سورج کس کے پرىم مىں جلتا مَنوا لے کر گُھومے ہے
کس کى کھوج مىں چاند گگن کے چکّر کھائے سارى رات
لاج کى مارى سوچ رہى ہوں کىسے اُس کى اور تکوں
ساجن جى کى سىوا کى نہ ناز اُٹھائے سارى رات
روز ارادے باندھے، سوچا، رات تو اس کے نام کرىں
بات ىہ دن بھر ىاد رہے پر ىاد نہ آئے سارى رات
گھر وىران پڑے ہوں تو آسىب بسىرا کرتے ہىں
دل کى بستى پر منڈلائے دکھ کے سائے سارى رات
آدھى رات کى زارى اچھى جىون بھر کے رونے سے
بے کَل مَن اب آدھى رات کے قرض چکائے سارى رات
ذہن ہے بوجھل، تن دُکھتا ہے،مَن بھى جلتا انگارہ
سارى رات ہى سوئے پھر بھى سو نہ پائے سارى رات
اىک ذرا سى جان نے مىرى کىا کىا جھنجھٹ پالے ہىں
دن بھر کے سب جھگڑے سوچوں مىں نپٹائے سارى رات
ىوں بھى ہو کہ بِپتا جو بھى بىتے مَن پہ بوجھ نہ ہو
اور کبھى بے بات کے مىرا جى گھبرائے سارى رات
بُھولى باتىں، بِسرے قصے، سُندر مکھڑے، پىارے لوگ
ىادوں کى بارات نے کىا کىا رنگ جمائے سارى رات
آس نراس کے سنگھم پر ىہ جىون کب تک بىتے گا
دن کو خود ہى توڑے جو سَپنے دکھلائے سارى رات
نظرىں چھالا چھالا ہوگئىں، جَلتى دھوپ مىں تکنے سے
ان پىالوں مىں آشاؤں کے دِىپ جلائے سارى رات
بن مانگے جو دان کرے کىا مانگے سے نہ دىوے گا؟
بىٹھ رہو اُس دَر پر جھولى کو پھىلائے سارى رات
گىت کوى کے سُن کے سر تو دُھنتے ہو پر سوچا بھى؟
اس نے کتنى پِىڑ سہى، کىا کشت اُٹھائے سارى رات

(صاحبزادى امتہ القدوس)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 7 جولائی 2020

اگلا پڑھیں

Covid-19 عالمی اپڈیٹ 8 جولائی 2020ء