• 29 مئی, 2020

غزل

مُجھ کو مٹانا بس میں تُمہارے رہا نہیں
مقتل حیاتِ عشق ہے مرگِ وفا نہیں

جو رائیگاں گیا ہو کبھی بزمِ یار میں
وہ اشک اپنی آنکھ سے اَب تک گِرا نہیں

پہرے بٹھاؤ کِتنے ہی گُفت و شُنید پر
اہلِ طلب کے واسطے ہم بے نوا نہیں

سمجھیں گے خاک عقدۂ فیضانِ مُصطفےٰ
اُن کو کو طلب تو ہے مگر ذہنِ رسا نہیں

“کرب و بلا کا خوف ہے ‘ مقتل سے ڈرگئے”
ہم نے کِسی یزید کو ایسے کہا نہیں

جور و ستم سے ہم کو تو ڈرنا نہیں اے دوست
کچھ پل کی بات ہےسُنو ایسے سدا نہیں

(پروفیسر کرامت راج۔کینیڈا)

پچھلا پڑھیں

Covid-19 اپ ڈیٹ19۔مئی2020ء

اگلا پڑھیں

دفاتر تحریک جدید