• 6 مئی, 2021

پنج ارکانِ اسلام

اَلَستُ اور بَلیٰ کے دن ہوا تھا عہد جو باہم
نہ ہو اِعلان گر اُس کا تو ایماں نامکمل ہے
توجہ ہو، تَضَرُّع ہو، تَذَلُّل ہو، تَبتُّل ہو
نمازِ عشق اِن اَرکان سے ہوتی مکمل ہے
زکوٰۃِ مال سے گر تزکیہ حاصِل نہ ہو دل کا
تو گویا دے کے سونے کو لیا بدلے میں پیتل ہے
نہ دیں وہ داد روزے کی اگر ’’اَلصَّوْمُ لِی‘‘ کہہ کر
تو اِنعامِ ’’انَا اَجْزِیْ بِہٖ‘‘ اُمیدِ مُہمَل ہے
نہ جانا صرف ظاہِر پر اَدائے حج میں اے مُسلم!
کہ رازِ عشق ہرہررُکن میں اس کے مُقَفَّل ہے
کبھی پھرتے ہیں کوچے میں کبھی چاروں طرف گھر کے
صفامروہ پہ چین اُن کونہ کعبے میں اُنہیں کَل ہے
یہاں کیاکام دیوانوں کا ۔ بستی سے نکل جائیں
جو ہیں بیتاب مرنے کو ٹھکانا اُن کا جنگل1؎ ہے
کفن اِحرام اور لَبَّیک نعرہ ہے شہادت کا
حَرَم لیلیٰ کا محمِل ہے، مِنیٰ عاشق کا مَقتَل ہے
مبارکباد اے طالِب! کہ ظُلمت گاہِ عالَم میں
حبیبِؐ یار رہبر ہے، کلامِ یار مَشعَل ہے
مَشو مَغمُوم ازفکرِ صفائے باطِن اے زاہد!
کہ جتنے زنگ مخفی ہیں محبت سب کی صَیقل ہے

(1؎ میدانِ عرفات
بخار دل صفحہ187۔188)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 30 اپریل 2021

اگلا پڑھیں

الفضل آن لائن 1 مئی 2021