• 20 جولائی, 2024

کلمات فارسی از ملفوظات حضرت مسیح موعودؑ (قسط 5)

کلمات فارسی از ملفوظات حضرت مسیح موعودؑ
قسط 5

ک

؏ کِہْ حَلوَا چُوْ یِکْ بَارْ خُوْردَنْد و بَسْ

ترجمہ:۔ حلوا جو ایک بار کھا لیا کافی ہے۔

؏ کَسْ بِشَنْوَدْ یَا نَشَنْوَدْ مَنْ گُفْتُگُوْئے مِیْکُنَمْ

ترجمہ:۔ کوئی سنے یا نہ سنے میں بات کرتارہوں گا۔

؏ کِہْ خُبثِ نَفْس نَہْ گَرْدَدْ بِسَالْھَا مَعْلُوم

ترجمہ:۔ کہ نفس کی خباثت کا سالوں میں بھی پتا نہیں لگتا۔

؏ کَسْ نَدِیْدَمْ کِہْ گُمْ شُدْ اَزْ رَہِ رَاسْت

ترجمہ:۔ میں نے کسی شخص کوسیدھے راستہ پرچلتے ہوئے گم ہوتا نہیں دیکھا۔

؎ کَسِےْ پُرْسِیْد زَاںْ پِیْرِ خِرَدْ مَنْد
کِہْ اَےْ رَوْشَنْ گُہَر پِیْرِ خِرَدْ مَنْد

ترجمہ:۔ کسی نے اس (یعقوب) سے (جسکا بیٹا گم ہوگیا تھا) پوچھا کہ اے روشن ضمیر دانا بزرگ!

؏ کَالَائے بَدْ بِرِیْشِ خَاوَنْد

ترجمہ:۔ خراب سامان کی ذمہ داری خاوندپرہے

؏ کِہْ پِیْش اَزْپِدَر، ْمُرْدِہْ بِہْ نَاخَلَفْ

ترجمہ:۔ ناخلف بیٹے کا باپ سے پہلے مرجانابہتر ہے۔

؎ کَسْ نَیْاَیَدْ بِخَانَۂ دَرْوِیْش
کِہ خَرَاجِ بُوْم و بَاغْ گُزَارْ

ترجمہ:۔ فقیر کے گھر کوئی نہیں آتا کہ زمین اورباغ کاخراج ادا کرو۔

؎ کِلِیْدِ دَرِ دُوْزَخْ اَسْت آںْ نَمَاز
کِہْ دَرْچَشْمِ مَرْدُمْ گُذَارِی دَرَاز

ترجمہ :۔وہ نماز دوزخ کے دروازہ کی کنجی ہے جو تو لوگوں کو دکھانےکے لئے لمبی پڑھے۔

؏ کَارِدُنْیَا کَسِے تَمَامْ نَہْ کَرْد

ترجمہ:۔ دنیا کے کام کسی نے پورے نہیں کئے۔

؎ کَارِ دُنْیَا کَسِےْ تَمَامْ نَہْ کَرْدْ
ہَرْچِہْ گِیْرِیْد مُخْتَصَرْ گِیْرِیْد

ترجمہ:۔ دنیا کے کام کسی نےپورے نہیں کیے۔ تم جوکچھ لیتے ہوتھوڑا لیتے ہو۔

؏ کِہْ گُفْتِہْ اَنْدْ کِہْ نِکُوْیِیْ کُنْ وَدَرْآبْ اَنْدَازْ

ترجمہ:۔ کہتے ہیں کہ نیکی کردریامیں ڈال۔

؏ کَےْ آمَدِیْ وکَےْ پِیْرشُدِیْ
(کہاوت)

ترجمہ:۔ ابھی تمہیں آئے ہوئے دن ہی کتنے ہوئے ہیں کہ پیرومرشد بن بیٹھے؟

؎ کِلِیْدِ اِیْں ھَمِہْ دَوْلَتْ مَحَبَّتْ اَسْت و وَفَا
خُوْشَا کَسِیْکِہْ چُنِیْں دَوْلَتَشْ عَطَا بَاشَدْ

ترجمہ:۔ اس ساری دولت کی کنجی محبت اور وفاہے خوش قسمت ہے وہ جسے ایسی دولت مل جائے۔

؎ کَسِیْکِہْ سَایَۂِ بَالِ ہُمَاشْ سُوْد نَدَادْ
بِیْآیَدَشْ کِہْ دُو رُوْزِے بِظِلِّ مَا بَاشَدْ

ترجمہ:۔ وہ شخص جسے بال ہما نے بھی فائدہ نہ دیا ہو اسے چاہئے کہ دودن ہمارے زیرِ سایہ رہے۔

؎ کَامِلَاں حَیّ اَنْد دَرْ زِیْرِزَمِیْں
تُوبِگُوْرِیْ بَاحَیَاتِ اِیْں چُنِیْں

ترجمہ:۔ کامل لوگ تو زمین کے نیچے بھی زندہ ہوتے ہیں تو ایسی زندگی کے ساتھ قبر میں ہے۔

؎ کَرْبَلَائِیْست سَیْرِ ہَرْآنَمْ
صَدْحُسَیْن اَسْت دَرْ گَریبَانَم

ترجمہ:۔ کربلا میری ہرآن کی سیر گاہ ہےسینکڑوں حسین میرے گریبان کے اندر ہیں۔

؎ کَےْ اَنْدَاخْتَمْ دَرْ دِلْ
مَگَرْ اَنْدَاخْتَمْ دَرْ گِلْ

ترجمہ:۔ میں نے کب دل میں ڈالا ہے شاید کیچڑ میں ڈال دیا ہے۔

؏ کَسْبِ کَمَالْ کُنْ کِہْ عَزِیْزِجَہَاںْ شَوِی
(ضرب المثل)

ترجمہ:۔ کوئی کمال حاصل کر تا لوگ تجھے پسند کریں۔

؎ کِہْ بِےْ حُکْمِ شَرْع آبْ خُوْرْدَنْ خَطَا اَسْت
اَگَرْ خُوْں بِہْ فَتْویٰ بِرِیْزِیْ رَوَا اَسْت

ترجمہ:۔ کیونکہ شریعت کی اجازت کے بغیر پانی پینا بھی گناہ ہے۔ اگر شرع کے حکم سے تو قتل بھی کرے تو جائز ہے۔

گ

؎ گَاہْ بَاشَدْ کِہْ کُوْدَکِے نَادَان
بِہْ غَلَطْ بَرْ ھَدَفْ زَنَدْ تِیْرِے

ترجمہ:۔ کبھی ایسابھی ہو تا ہے کہ نادان بچہ غلطی سےنشانہ پر تیر مار دیتا ہے۔

؎ گُوْیَنْد کِہْ بِحَشْرْ جُسْتُجُوْ خَواہَدْ بُوْدْ
وَاںْ یَارِعَزِیْزِ تُنْدخُو ْخَواہَدْ بُوْد

ترجمہ:۔ کہتے ہیں قیامت کے دن تفتیش ہوگی اور اس دن وہ پیارا محبوب تند خو ہوگا۔

؎ گَرْنَبَاشَدْ بِہْ دُوْست رَہْ بُرْدَنْ
شَرْطِ عِشْق اَسْت دَرْطَلَبْ مُرْدَنْ

ترجمہ:۔ اگرچہ محبوب تک رسائی پانے کا کوئی ذریعہ نہ ہو پھر بھی عشق کاتقاضا یہ ہے کہ اس کی تلاش میں جان لڑا دی جائے۔

؎ گَہِےْ بَرْطَارَمِ اَعْلیٰ نِشِیْنَمْ
گَہِےْ بَرْپُشْتِ پَائے خُوْد نَہْ بِیْنَمْ

ترجمہ:۔ کبھی تو میں ایک بلند مقام پر بیٹھا ہوتا ہوں اور کبھی اپنے پاؤں کی پشت پر بھی نہیں دیکھ سکتا۔

؏ گَرْحِفْظِ مَرَاتِبْ نَکُنِیْ زِنْدِیْقِیْ

ترجمہ:۔ اگرتوحفظ مراتب نہیں کرتا،توبے دین ہے۔

؎ گُوْیَنْد سَنْگ لَعْل شَوَدْ دَرْمَقَامِ صَبْر
آرِے شَوَدْ وَلِیْک بِخُوْنِ جِگَر شَوَدْ

ترجمہ:۔ کہتے ہیں صبر کرنے (یعنی لمبا عرصہ گزرنے) سے پتھر لعل بن جاتا ہے۔ ہاں بن جاتا ہے لیکن خون جگر پی کر۔

؎ گَرْ قَضَا رَا عَاشِقِے گَرْدَدْ اَسِیْر
بُوْسَدْ آں زَنْجِیْر رَا کَزْ آشِنَا

ترجمہ:۔ اگر اتفاقاً کوئی عاشق قید میں پڑ جائے تو اس زنجیر کو چومتا ہے جس کا سبب آشنا ہوا۔

؎ گُلِےْ کِہْ رُوْئے خَزَاںْ رَا گَہِے نَخَواہَد دِیْد
بِبَاغِ مَاسْت اَگَرْ قِسْمَتَتْ رَسَا بَاشَدْ

ترجمہ:۔ وہ پھول جو کبھی خزاں کا منہ نہیں دیکھے گا وہ ہمارے باغ میں ہے اگر تیری قسمت یاورہے۔

؎ گَرْنَبُوْدے دَرْمُقَابِل رُوْئےمَکْرُوْہ وسِیَاہ
کَسْ چِہْ دَانِسْتِے جَمَالِ شَاہِدِ گُلْفَامْ رَا

ترجمہ:۔ اگر مقابلہ میں بد شکل اور سیاہ رو نہ ہوتا تو کیونکر کوئی گل اندام معشوق کا حسن پہچان سکتا۔

؎ گَرْنَیْفُتَادِےْ بِخَصْمِےکَارْ دَرْجَنْگ ونَبَرْد
کَےْشَوَدْ جَوْہَرْعَیَاں شَمْشِیْرِخُوْں آشَامْ رَا

ترجمہ:۔ اگر دشمن سے لڑائی اور جنگ واقع نہ ہوتی تو خون پینے والی تلوار کا جوہر کیونکر ظاہر ہوتا۔

؎ گَرْ وَزِیْر اَزْ خُدَا بِتَرْسِیْدِےْ
ہَمْچُنَاں کَزْمَلِکْ مَلَکْ بُوْدِےْ

ترجمہ:۔ اگر وزیر خدا سے اس طرح ڈرتا جیسے بادشاہ سے (ڈرتا ہے) تو فرشتہ ہوتا۔

؏ گَرْ وَزِیْر اَزْ خُدَا بِتَرْسِیْدِےْ

ترجمہ:۔ اگر وزیر خدا سے ڈرتا۔

؎ گَرْچِہْ وِصَالَشْ نَہْ بِکُوْشِشْ دِہَنْد
ہَرْ قَدَرْ اَےْ دِلْ کِہْ تَوَانِیْ بِکُوْش

ترجمہ:۔ اگرچہ اس کا وصال کوشش سے حاصل نہیں ہوسکتا پھر بھی اے دل جہاں تک تجھ سے ہوسکے کوشش کر۔

ل

؏ لُطْف کُنْ لُطْف کِہْ بِیْگَانِہْ شَوَدْ حَلْقِہْ بِگُوْش

ترجمہ :۔ مہربانی کر مہربانی تا بیگانہ بھی غلام بن جائے۔

؎ لَبْ بِہْ بَنْد وگُوْش بَنْدْ وچَشْم بَنْد
گَرْنَہْ بِیْنِیْ نُوْرِ حَقْ بَرْ مَا بِخَنْد

ترجمہ:۔ ہونٹ کان اور آنکھیں قابومیں کر لے اگر تجھے خدا کا نور نظر نہ آئے تو ہمارا مذاق اڑا۔

(محمود احمد طلحہ۔ مربی سلسلہ و استاد جامعہ احمدیہ یوکے)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 31 مئی 2022

اگلا پڑھیں

ارشاد باری تعالیٰ