• 15 اگست, 2022

دشتِ جنوں میں عقل کا سیلاب آ گیا

دشتِ جنوں میں عقل کا سیلاب آ گیا
(کلام محترم چوہدری محمد علی مضطر)

گھر کے کواڑ زیرِ زباں بولنے لگے
مالک چلے گئے تو مکاں بولنے لگے

دشمن اگر ہماری زباں بولنے لگے
بجھ جائے آگ اور دھؤاں بولنے لگے

سورج چلا گیا تو اُتر آئی چاندنی
پلکوں پہ روشنی کے نشاں بولنے لگے

وہ سنگدل بھی کوئے ندامت میں جا بسا
پتھر بھی پانیوں کی زَباں بولنے لگے

پہلے خلائے جاں میں خموشی رہی مگر
پھر یوں ہؤا کہ کون و مکاں بولنے لگے

نمرود نے جلائی تھی جو آگ، بجھ گئی
آزردگانِ آذرِ جاں بولنے لگے

پانی اُتر گیا تو نظر آئے فاصلے
ساحل سمندروں کی زباں بولنے لگے

دشتِ جنوں میں عقل کا سیلاب آ گیا
اندیشہ ہائے سود و زیاں بولنے لگے

بیتے ہوئے دنوں سے نہ سرگوشیاں کرو
ایسا نہ ہو کہ عمرِ رواں بولنے لگے

کس کی مجال تھی کہ سرِ دار بولتا
بولے ہیں ہم تو تم بھی میاں! بولنے لگے

مضطرؔ! ضمیرِ لفظ کے سُونے مکان میں
وہ حبس تھا کہ وہم و گماں بولنے لگے

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 2 جون 2022

اگلا پڑھیں

ارشاد باری تعالیٰ