• 20 ستمبر, 2020

آنکھوں کی ٹھنڈک مرزا مسرور ہوا

نوروں نہلایا وہ خود بھی نور ہوا
آنکھوں کی ٹھنڈک مرزا مسرور ہوا

صبحِ نَو کی ایک نئی تعبیر ہوئی
آخرِ شب جو اِک بندۂ منظور ہوا

اِک جلوے نے سارا عالم اوڑھ لیا
بیت الفضل ہی گویا کوہِ طور ہوا

دشمن کا ہر حربہ ٹوٹا اور اپنی
وحدت کا سِکہ بیٹھا مشہور ہوا

اس کا باطن عکسِ غلامِ احمد ہے
ظاہر میں تو وہ ابنِ منصور ہوا

طاہر سے بچھڑا تو بوجھل بوجھل تھا
پایا جب مسرور تو من مسرور ہوا

مت بھولو، ہم آن ملیں گے متوالو!
ہجر بھی تو دنیا کا اِک دستور ہوا

جب سے مانگا عارف اس کو سجدوں میں
لطف عبادت کا تب سے بھر پور ہوا

(عبدالسلام عارف)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 3 ستمبر 2020

اگلا پڑھیں

الفضل آن لائن 4 ستمبر 2020