• 26 فروری, 2024

حیراں ہیں دیا تم نے اِسے کیسا یہ نذرانہ

کرتا رہے گا یاد تمہیں سارا زمانہ
جذبہ ہے تمہارا یہ یکتا و یگانہ

گلشن میں بہار آئی اِسی جذبہ جنوں سے
حیراں ہیں دیا تم نے اِسے کیسا یہ نذرانہ

حیاتِ جاودانی ہی ہے حقیقی خزانہ
ہاتھ میں ہر شہید کے ہے یہی پروانہ

پڑھتے رہیں گے لوگ تمہارا فسانہ
بن جائے گا یہ بھی ایک دن قومی ترانہ

یارب! ہر ایک کو ظلموں سے بچانا
بھٹکے ہوؤں کو یا رب! نیکی پہ لگانا

(ریاض محمود باجوہ۔ نوئے ویڈ جرمنی)

پچھلا پڑھیں

کیوں نہ جائیں ہم ان سب پے قرباں

اگلا پڑھیں

ارشاد باری تعالی