• 6 اگست, 2021

تو اگر درمیاں نہیں ہوتا

تو اگر درمیاں نہیں ہوتا
عشق کا امتحاں نہیں ہوتا
تیرے قدموں کی خاک ہوتا میں
قالبِ جسم و جاں نہیں ہوتا
تجھ سے سب کچھ، جو تو نہیں ہوتا
کچھ بھی، اے میری جاں! نہیں ہوتا
جو کروں نذر۔ جسم، جان کہ دل
تیرے شایانِ شاں نہیں ہوتا
بات کرتا ہوں روبرو تجھ سے
جب کوئی درمیاں نہیں ہوتا
مسکرا تو رہا ہوں محفل میں
پر غمِ دل نہاں نہیں ہوتا
درد اگر دردِ عشق نَے ہوتا
وجہِ تسکینِ جاں نہیں ہوتا
کوئی غم ہوتا نَے کوئی غمگیں
اک دلِ ناتواں نہیں ہوتا
وصل کی آرزو نہ ہو جس کو
ہجر اس پر گراں نہیں ہوتا
لفظ ہرچند آئینے ہیں، مگر
دل میں جو ہے عیاں نہیں ہوتا
چشم بھی بولتی ہے، چہرہ بھی
لفظ ہی ترجماں نہیں ہوتا

(مئی2008ء۔دمشق
میر انجم پرویز۔لندن)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 7 جولائی 2021

اگلا پڑھیں

الفضل آن لائن 8 جولائی 2021