• 19 اپریل, 2021

جدھر دیکھوابر گنہ چھا رہا ہے

جدھر دیکھو ابر گنہ چھا رہا ہے
گناہوں میں چھوٹا بڑا مبتلا ہے
مرے دوستو شرک کو چھوڑ دو تم
کہ یہ سب بلاؤں سے بڑھ کر بلا ہے
یہ دم ہے غنیمت کوئی کام کر لو
کہ اس زندگی کا بھروسہ ہی کیا ہے
محمدؐ پہ ہو جان قرباں ہماری
کہ وہ کوئے دلدار کا رہنما ہے
غضب ہے کہ یوں شرک دنیا میں پھیلے
مرا سینہ جلتا ہے دل پُھنک رہا ہے
خدا کے لیے مرد میداں بنو تم
کہ اسلام چاروں طرف سے گھرا ہے
تم اب بھی نہ آگے بڑھو تو غضب ہے
کہ دشمن ہے بےکس، تمھارا خدا ہے
بجا لاؤ احکام احمدؐ خدارا
ذرا سی بھی گر تم میں بوئے وفا ہے
صداقت کو اب بھی نہ جانا تو پھر کب
که موجود اک ہم میں مرد خدا ہے
تیری عقل کو قوم کیا ہو گیا ہے
اسی کی ہے بدخواه جو رہنما ہے
وہ اسلام دنیا کا تھا جو محافظ
وہ خود آج محتاج امداد کا ہے
بپا کیوں ہوا ہے یہ طوفاں یکایک
بتاؤ تو اس بات کی وجہ کیا ہے
یہی ہے کہ گمراه تم ہو گئے ہو
نہ پہلا سا علم اور نه وہ اتقا ہے
اگر رہنما اب بھی کوئی نہ آئے
تو سمجھو کہ وقت آخری آ گیا ہے
ہمیں ہے اسی وقت ہادی کی حاجت
یہی وقت اک رہنما چاہتا ہے
یہ ہے دوسری بات مانو نہ مانو
مگر حق تو یہ ہے کہ وہ آ گیا ہے
اٹھو اس کی امداد کے واسطے تم
حمیَّت کا یارو یہی مقتضا ہے
اٹھو دیکھو اسلام کے دن پھرے ہیں
کہ نائب محمدؐ کا پیدا ہوا ہے
محبت سے کہتا ہے وہ تم کو ہر دم
اٹھوسونے والو کہ وقت آگیا ہے
دم و خم اگر ہو کسی کو تو آئے
وہ میداں میں ہر اک کو للکارتا ہے
ہراک دشمن دیں کو ہے وہ بلاتا
کہ آؤ اگر تم میں کچھ بھی حیا ہے
مقابل میں اس کے اگر کوئی آئے
نہ آگے بچے گا نہ اب تک بچا ہے
مسیحا و مهدی دوران آخر
وہ جس کے تھے تم منتظر آ گیا ہے

(کلام محمود)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 8 مارچ 2021

اگلا پڑھیں

الفضل آن لائن 9 مارچ 2021