• 29 فروری, 2024

تمہارے دم سے تھیں گھر میں ہمارے برکتیں بابا!

ہمیشہ پیار کی تم نے مجھے دیں دولتیں بابا!
جبیں پر میری کندہ ہیں تمہاری الفتیں بابا!

بھلا پائیں گے ہم کیسے تمہاری محنتیں بابا!
ہمیں ساری کی ساری یاد ہیں وہ کلفتیں بابا!

تمہاری روز و شب کی محنتوں سے یہ ہؤا ممکن
ملی ہیں کیسی کیسی اِس جہاں میں راحتیں بابا!

دیے اولاد کو اپنے سنہرے دن جوانی کے
لکھیں تم نے مقدر میں ہمارے رفعتیں بابا!

بھرا رہتا تھا خوشیوں سے سدا آنگن ہمارا تب
تمہارے دم سے تھیں گھر میں ہمارے برکتیں بابا!

تمہارے نام سے پہچان دنیا میں ہماری ہے
کبھی بھی ختم یہ ہوں گی نہ تم سے نسبتیں بابا!

تری اک مسکراہٹ پر کرے صدقے، تری بشؔریٰ
ملی ہیں اِس کو جو بھی دولتیں اور شہرتیں بابا!

(بشریٰ سعید عاطف۔ مالٹا)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 10 مارچ 2023

اگلا پڑھیں

ارشاد باری تعالیٰ