• 19 اپریل, 2021

دل عبادت سے چرانا، اور جنت کی طلب

دل عبادت سے چرانا، اور جنت کی طلب
کام چور اس کام پر کس منہ سے اجرت کی طلب
حشر تک دل میں رہے اس سرو قامت کی طلب
یہ طلب ہے اپنی یارب! کس قیامت کی طلب
ہو مبارک خضرؑ کو سر چشمۂ آبِ بقا
ہے ہمیں آب دمِ تیغِ شہادت کی طلب
بڑھ گئی ہے عشق میں حرص اس قدر اپنی کہ
غم پہ غم کی آرزو حسرت پہ حسرت کی طلب
جو حلاوت زندگی کی چاہتا ہے چرخ سے
کاسۂ زہراب سے کرتا ہے شربت کی طلب
ہو کے دل غمزہ کا بسملِ ناز پر دیتا ہے دم
کرتا ہے آفت طلب آفت پہ آفت کی طلب
یاد ہیں صلب و شکم کی پہلی دونوں منزلیں
یاں کہاں وسعت کہ تُو کرتا ہے راحت کی طلب
گر گلستاں جہاں میں تنگ ہے تو غنچہ وار
کر کشادہ دل سے اپنے ذوقِ وسعت کی طلب

(ابراہیم ذوق)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 12 مارچ 2021

اگلا پڑھیں

الفضل آن لائن 13 مارچ 2021