• 4 دسمبر, 2021

تو جو میرا بنے تو بات ہے

تو مرے دل کی شش جہات بنے
اِک نئی میری کائنات بنے

سب جو تیرا ہے لاکھ ہو میرا
تُو جو میرا بنے تو بات بنے

نیچ ہے تجھ سے منقطع ہر ذات
جس کا تُو ہو اُسی کی ذات بنے

عالمِ رنگ و بو کے گل بوٹے
خواب ٹھہرے ، توہمات بنے

سادہ باتوں کا بھی ملا نہ جواب
سب سوالات مظلمات بنے

یہ شب و روز و ماہ و سال تمام
کیسے پیمانہ صفات بنے؟

ہوئی میزانِ ہفتہ کب آغاز؟
کیسے دن رات سات سات بنے؟

عالم حیرتی کے مندر میں
کبھی بت مظہرِ صفات بنے

کبھی مخلوق ہو گئی ہمہ اُوست
آتش و آب، عین ذات بنے

کتنے منصور چڑھ گئے سر دار
کتنے نعرے تعلیات بنے

کتنے عزیٰ بنے، مٹے کَے بار؟
کتنے لات اُجڑے کتنے لات بنے

کتنے محمود آئے، کتنی بار
سومنات اُجڑے، سومنات بنے

جو کھنڈر تھے محل بنائے گئے
کتنے محلوں کے کھنڈرات بنے

عالم بے ثبات میں شب و روز
آج کی جیت کل کی مات بنے

تیرے منہ کے سبک سہانے بول
دل کے بھاری معاملات بنے

دن بہت بے قرار گزرا ہے
آ مرے چاند ، میری رات بنے

(کلام طاہر)

پچھلا پڑھیں

حضرت خلیفۃ المسیح کا خصوصی پیغام جماعت احمدیہ ناروے کے نام

اگلا پڑھیں

الفضل آن لائن 16 نومبر 2021