• 27 فروری, 2021

سخنوروں کے شہر میں وہ شہ سُخن کمال است

سخنوروں کے شہر میں وہ شہ سُخن کمال است
گُلاب تو ہزار ہیں وہ گُل بدن کمال است
مِرے لیے وہی تو ہے متاعِ جاں جمالِ زیست
اگر وہ ساتھ چھوڑ دے، مِرے لیے جہان نیست
سنو گے اُسکی گفتگو کہو گے بات ختم شد
ملے جو آفتاب سے کہو گے رات ختم شد
یونہی عطا نہیں ہوا اُسے مقامِ دلبری
مجھے دکھاؤ تو سہی کرے جو اُسکی ہمسری
اُسی پہ جاں فریفتہ یہ دل بصد نیاز ہے
غزل غزل سا شخص وہ جو سر تا پا نماز ہے
اگر ملے نہ یار تو گہر تمام سنگ و خِشت
کہ عاشقوں کے واسطے وِصالِ یار ہے بہشت
دِلم درِ فِراقِ تُو، جوں طفلِ اشکبار ہو
اذاں کہ انتظار میں جوں گوشِ روزہ دار ہو
اے شاہِ گُل مِرے لیے تِری رضا ہے تاج و تخت
یہی ہے میری داستاں یہی ہے میری سرگزشت
تُو پیار سے جو دیکھ لے تو ساغر و شراب کیا
کلام ہو تِرا اگر تو نغمہ و رُباب کیا
سدا رہے تُو شادماں گُلاب سے اے دلبرم
میں اپنا حال کیا کہوں میں جان و دل سے تُو شُدم

(مبارک صدیقی)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 16 فروری 2021

اگلا پڑھیں

الفضل آن لائن 17 فروری 2021