• 6 مئی, 2021

ہر طرف دشتِ بے اماں سے دُھواں

ہر طرف دشتِ بے اماں سے دُھواں
اُٹھ رہا ہے یہاں وہاں سے دُھواں

راکھ بکھری پڑی ہے گلیوں میں
اور اُٹھتا ہے ہر مکاں سے دھواں

لُٹ گیا ہے وطن میں امن و سکوں
اور اِدھر رنجِ رائیگاں سے دھواں

رہبروں کا اُصول کذب و ریا
خلقتِ شہر کی زُباں سے دھواں

سب سُلگتے ہیں منبر و محراب
واعظوں کے ہر اک بیاں سے دھواں

بے یقیں ہو گئی ہے خلقِ خُدا
ہر طرف چھا گیا گُماں سے دھواں

جل رہی ہے زمین پاؤں تلے
اور نکلتا ہے سائباں سے دھواں

حاکمِ وقت! دیکھ اُٹھتا ہے
یہ ترے سنگِ آستاں سے دھواں

بھر گیا ہے دلِ حزیں میں مرے
غمِ جاناں غمِ جہاں سے دھواں

(ڈاکٹر فضل الرحمن)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 16 اپریل 2021

اگلا پڑھیں

الفضل آن لائن 17 اپریل 2021