• پیر 30 مارچ 2020   (6 شعبان 1441)

غزل

تیری صورت نگاہوں میں بستی رہے یونہی حسرت سے میں اِس کو تکتا رہوں
رقصاں رقصاں رہوں گیت گاتا رہوں سب کو دیوانہ سا خواہ میں دِکھتا رہوں

میں فقیرانہ آیا ہوں در پہ ترے ہوں گنہگار میں مجھ کو معلوم ہے
تیری نظرِ کرم یونہی پڑتی رہے یونہی مستوں میں مستانہ دِکھتا رہوں

بے قراری میں راحت کے سامان ہیں کیا عجب میری چاہت کے انداز ہیں
تیری قُربت میں بھی تیری فُرقت میں بھی مرغِ بِسمِل کی مانِند تڑپتا رہوں

تجھ کو پانے کی لذت الگ ہے مگر تجھ کو کھونے کا بھی کچھ الگ ہے مزہ
ساتھ بھی ہم قدم بن کے چلتا رہوں پِھر اچانک کہیں پہ بچھڑتا رہوں

کروں ریگزاروں کو گلشن کبھی ہر اندھیرے کو بھی جگمگاتا رہوں
بن کے بجلی کبھی میں چمکتا رہوں بن کے بادل کبھی میں برستا رہوں

(پروفیسر کرامت راج ؔ)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 17 فروری 2020

اگلا پڑھیں

ارشاد باری تعالیٰ