• 6 اگست, 2021

گھٹا کرم کی ،ہجوم ِبلا سے اُٹھی ہے

گھٹا کرم کی، ہجومِ بلا سے اُٹھی ہے
کرامت اک دلِ درد آشنا سے اُٹھی ہے
جو آہ، سجدۂِ صبر و رضا سے اُٹھی ہے
زمین بوس تھی، اُس کی عطا سے اُٹھی ہے
رسائی دیکھو! کہ باتیں خدا سے کرتی ہے
دُعا جو قلب کے تحت الثریٰ سے اُٹھی ہے
یہ کائنات ازل سے نہ جانے کتنی بار
خلا میں ڈوب چکی ہے خلا سے اُٹھی ہے
سدا کی رسم ہے، ابلیسیت کی بانگِ زبوں
انا کی گود میں پل کر اِباء سے اُٹھی ہے
حیا سے عاری، سیہ بخت، نیش زن، مردود
یہ واہ واہ کسی کربلا سے اُٹھی ہے
خموشیوں میں کھنکنے لگی کسک دل کی
اک ایسی ہوک دلِ بےنوا سے اُٹھی ہے
مسیح بن کے وہی آسماں سے اتری ہے
جو التجا، دلِ ناکتخدا سے اُٹھی ہے
وہ آنکھ اُٹھی تو مردے جگا گئی لاکھوں
قیامت ہو گی، کہ جو اس ادا سے اُٹھی ہے
امر ہوئی ہے وہ تجھ سے محمدؐ عربی
ندائے عشق، جو قول بلیٰ سے اُٹھی ہے
ہزار خاک سے آدم اٹھے، مگر بخدا
شبیہ وہ! جو تری خاک پا سے اُٹھی ہے
بنا ہے مہبط انوار قادیاں دیکھو
وہی صدا ہے، سنو! جو سدا سے اُٹھی ہے
کنارے گونج اٹھے ہیں زمیں کے، جاگ اٹھو
کہ اک کروڑ صدا، اک صدا سے اُٹھی ہے
جو دل میں بیٹھ چکی تھی ہوائے عیش و طرب
بڑے جتن سے، ہزار التجا سے اُٹھی ہے
حیاتِ نو کی تمنا ہوئی تو ہے بیدار
مگر یہ نیند کی ماتی، دعا سے اُٹھی ہے

(کلام طاہر ایڈیشن 2004 صفحہ66۔67)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 19 جولائی 2021

اگلا پڑھیں

الفضل آن لائن 20 جولائی 2021