• 5 دسمبر, 2021

غزل

کہیں کسی کے لیے بات یہ عجیب نہ ہو
نجیب کیسے ہو، جو بندۂ منیب نہ ہو
ملے وہ مجھ سے مگر ساتھ میں رقیب نہ ہو
پھر اس کے بعد گھڑی ہجر کی نصیب نہ ہو
رکھے وہ دوستی مجھ سے بغیر شرطوں کے
وہ دل کی بات کرے گرچہ وہ ادیب نہ ہو
مریضِ عشق ہوں اس کا، بنے وہ چارہ گر
وہ دکھ کو دور کرے چاہے وہ طبیب نہ ہو
وطن سے دور ہو مجبوریوں کے باعث جو
امیر ہو یا نہ ہو، دل کا وہ غریب نہ ہو
سفر میں جائے تو ہوہمسفر خیالوں میں
ذرا بھی دل سے مرے دور وہ حبیب نہ ہو
سکھائے علم جو حکمت سے اور محبّت سے
زبان شیریں ہو، گو وہ بڑا خطیب نہ ہو
بھروسا کس پہ کریں سب ہیں اپنی دُھن میں مگن
یہاں ہمارا اگر کوئی بھی حسیب نہ ہو
دعائیں ہوتی ہیں کیسے قبول پھر ساری
کبھی یہ ہو نہیں سکتا خدا مجیب نہ ہو
ہے تیری زیست کا مقصد ہی اور کیا طارق
تِرا حبیب ترے دل کے جو قریب نہ ہو

(ڈاکٹر طارق انور باجوہ۔ لندن)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 20 اکتوبر 2021

اگلا پڑھیں

ارشاد باری تعالیٰ