• بدھ 1 اپریل 2020   (8 شعبان 1441)

جو کہا اُس نے پورانشاں ہو گیا

جو کہا اُس نے پورا نشاں ہو گیا
اک نئے دور کا پاسباں ہو گیا
وہ کڑی دھوپ میں سائباں ہو گیا
اُس کی خاطر زمیں نے دکھائے نشاں
اُس کی خاطر گواہ آسماں ہو گیا
جو کہا اُس نے پورا نشاں ہو گیا
اُس کی راہوں میں کانٹے بچھائے گئے
جبر کے پینترے آزمائے گئے
لاکھ سوچوں پہ پہرے بٹھائے گئے
لوگ آتے گئے کارواں ہو گیا
جو کہا اُس نے پورا نشاں ہو گیا
اُس کا دشمن ہوا جو کوئی معتبر
دیکھتے دیکھتے ہو گیا دربدر
جو فضاؤں میں تھا آ گیا خاک پر
حکمراں تھا کوئی بے اماں ہو گیا
جو کہا اُس نے پورا نشاں ہو گیا
اُس کے کوچے سے پھر ریگزاروں تلک
ریگزاروں سے پھر مرغزاروں تلک
اُس کی تبلیغ پہنچی کناروں تلک
مرجع خاص پھر قادیاں ہو گیا
جو کہا اُس نے پورا نشاں ہو گیا
دل شکستہ تھے اور حالت زار تھی
جبکہ طاعون کی ایک یلغار تھی
ہر گلی میں جنازوں کی بھرمار تھی
اُس کا گھر ایک دارالاماں ہو گیا
جو کہا اس نے پورا نشاں ہو گیا
دشمنوں پہ ملی اُس کو فتح مبیں
اُس کو اس بات کا بھی تھا کامل یقیں
مار سکتی نہیں ہے اُسے یہ زمیں
آسماں جس پہ ہو مہرباں ہو گیا
جو کہا اُس نے پورا نشاں ہو گیا
وہ محبت کے نغمات گاتا ہوا
دلفگاروں کو دل سے لگاتا ہوا
دلربا، دلنشیں، مسکراتا ہوا
عاشقوں کے لئے جانِ جاں ہوگیا
جو کہا اُس نے پورا نشاں ہوگیا

(مبارک صدیقی۔لندن)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 21 مارچ 2020

اگلا پڑھیں

الفضل آن لائن 23 مارچ 2020

مقبول ترین