• 23 جنوری, 2021

آؤ بلبل کہ مل کے نالہ کریں

مالِ دل دے دیا فقیر ہوئے
اس فقیری میں ہم اسیر ہوئے
جب سے دیکھا ہے روئے یارِ ازل
بت میری آنکھ میں حقیر ہوئے
ان نگاہوں نے کردیا گھائل
جگر و دل کے پار تیر ہوئے
زاہدو تم سے دل ملے کیونکر
تم ہو آزاد ہم اسیر ہوئے
دل غنی ہے متاعِ دنیا سے
جب سے اس در کے ہم فقیر ہوئے
آؤ بلبل کہ مل کے نالہ کریں
ہوگیا عرصہ ہمصفیر ہوئے
دل میں کیا جانے کیا خیال آیا
آج نغمہ سرا بشیر ہوئے

(کلام ِبشیر ایڈیشن 1963 صفحہ 8۔9)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 22 دسمبر 2020

اگلا پڑھیں

الفضل آن لائن 23 دسمبر 2020