• 1 دسمبر, 2020

تھام کے مىرا ہاتھ مجھے دى پىار کى اک پہچان

جگ والے کىا جانىں ہم نے کتنے رشتے کھوئے
ہاتھ ہىں کتنے اپنوں کى چاہت سے ہم نے دھوئے
کتنے پىاروں کے ہم نے ہىں من مىں درد سموئے
کتنى بىتى گھڑىوں نے مڑ مڑ کے نىن بھگوئے
’’ساجن گر مىں جانتى کہ پىت کرے دکھ ہوئے
نگر ڈھنڈورا پىٹتى کہ پىت نہ کرىو کوئے‘‘
چلے گئے جگ چھوڑ کے آگے پىچھے دونوں بھائى
پىچھے کلپن والوں کى بھى ىاد تمہىں نہ آئى
سوچا بھى جو اپنوں پہ تم نے ہے قىامت ڈھائى
ىاد تمہارى پل پل آکے من مىں نوک چھبوئے
’’ساجن گر مىں جانتى کہ پىت کرے دکھ ہوئے
نگر ڈھنڈورا پىٹتى کہ پىت نہ کرىو کوئے‘‘
ىہ دىکھا تھا چندا نکل سورج ہوا غروب
ىہ نہ سنا تھا ساتھ ہى پورا چاند بھى جائے ڈوب
تم دونوں نے ساتھ ہمارے چال چلى ىہ خوب
دىوا، بتى کے ہوتے بھى گھور اندھىرا ہوتے
’’ساجن گر مىں جانتى کہ پىت کرے دکھ ہوئے
نگر ڈھنڈورا پىٹتى کہ پىت نہ کرىو کوئے‘‘
شہر مىں جو بھى ملے کرے ہے تم دونوں کى باتاں
جاننے والوں کے من مىں ہىں رہىں تمہارى ذاتاں
تم بن چىن دناں پاىا نہ سکھ سے کاٹىں راتاں
تم تو مر کے بھى جىتے ہو مىں کہ جئے بھى موئے
’’ساجن گر مىں جانتى کہ پىت کرے دکھ ہوئے
نگر ڈھنڈورا پىٹتى کہ پىت نہ کرىو کوئے‘‘
جىون بھر تو ذات کو مىرى تم نے بخشا مان
تھام کے مىرا ہاتھ مجھے دى پىار کى اک پہچان
ىکدم پھر ىوں منہ موڑا جوں بىگانے انجان
اس بے مہرى نے من کى کھىتى مىں کانٹے بوئے
’’ساجن گر مىں جانتى کہ پىت کرے دکھ ہوئے
نگر ڈھنڈورا پىٹتى کہ پىت نہ کرىو کوئے‘‘
چہرہ ساکت سىنے مىں پر اٹھىں لاکھ ابال
جانے والے چلے گئے پتھر مىں دراڑىں ڈال
دل کى کرچىں بغل مىں لے کے حال سے ہوں بے حال
جىسے زخمى کونج کوئى پھڑکے، کرلائے، روئے
’’ساجن گر مىں جانتى کہ پىت کرے دکھ ہوئے
نگر ڈھنڈورا پىٹتى کہ پىت نہ کرىو کوئے‘‘
کون کسى کا سجّن، بىلى کون کسى کا مىت
بن مالک سُچّے سوہنے کے کون نبھائے پىت
جس تن لاگے سو تن جانے جگ کى ىہ ہى رىت
کون کسى کے دکھ پہ بىٹھا آنسو ہار پروئے
’’ساجن گر مىں جانتى کہ پىت کرے دکھ ہوئے
نگر ڈھنڈورا پىٹتى کہ پىت نہ کرىو کوئے‘‘
چادر لے کر چاندنى کى منہ پہ تم ہو سوئے
شکر خدا کا تم نے محتاجى کے بوجھ نہ ڈھوئے
جگ مگ کرتے دىس مىں جانے نکلے ہو لوئے لوئے
صبر کے ساگر مىں ہوں بىٹھى اپنا آپ ڈبوئے
شکر کا پانى لے کے تھوڑے درد کے دھبے دھوئے
’’ساجن گر مىں جانتى کہ پىت کرے دکھ ہوئے
نگر ڈھنڈورا پىٹتى کہ پىت نہ کرىو کوئے‘‘

(صاحبزادى امۃ القدوس)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 28 اکتوبر 2020

اگلا پڑھیں

الفضل آن لائن 29 اکتوبر 2020