• 18 اکتوبر, 2021

ہماری جاں خلافت پر فدا ہے

ہماری جاں خلافت پر فدا ہے
یہ روحانی مریضوں کی دوا ہے
اندھیرا دل کا اس سے مٹ گیا ہے
یہی ظلمات میں شمعِ ہدیٰ ہے
ہماری جاں خلافت پر فدا ہے
یہ روحانی مریضوں کی دوا ہے
حصارِ امن و ایمان و یقیں ہے
کنارِ عافیت، حبلِ متیں ہے
جوارِ رحمت  و خلدِبریں ہے
خدا نے ہم پہ یہ احساں کیا ہے
ہماری جاں خلافت پر فدا ہے
یہ روحانی مریضوں کی دوا ہے
خلافت سے ہے ہر اک کامیابی
خدا کا قرب اس کی ہمکلامی
رہیں جس کے لیے صدیاں ترستی
یہ وہ آئینۂ خالق نما ہے
ہماری جاں خلافت پر فدا ہے
یہ روحانی مریضوں کی دوا ہے
نبوت کا ہے اب فیضان جاری
خدا نے خود ہے یہ نعمت اُتاری
ہے واجب ہم پہ شکرِ ربّ باری
ہمیشہ دَر دُعاؤں کا کُھلا ہے
ہماری جاں خلافت پر فدا ہے
یہ روحانی مریضوں کی دوا ہے
عَلم اسلام کا لہرا رہا ہے
شِکست اب کفر ہر جا کھا رہا ہے
پیامِ امن ہر سو جا رہا ہے
ہر اک خوف و خطر زائل ہوا ہے
ہماری جاں خلافت پر فدا ہے
یہ روحانی مریضوں کی دوا ہے
نہ جانی جس نے بھی شانِ خلافت
نہ پائی اُس نے درگہ میں کچھ عزت
وہی پائے گا اب رُشد و ہدایت
سرِ تسلیم جس نے خَم کیا ہے
ہماری جاں خلافت پر فدا ہے
یہ روحانی مریضوں کی دوا ہے

(تنویر احمد ناصر۔قادیان)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 29 ستمبر 2021

اگلا پڑھیں

ارشاد باری تعالیٰ