• 20 ستمبر, 2020

اِک نظرِ التفات

پوشىدہ تجھ سے کوئى ہمارا نہىں ہے راز
سىنے بھرے ہىں سوز سے دل ہىں بہت گداز
رحمت کى آس مىں ہوئے دستِ دعا دراز
اِک نظرِ التفات سے مولا ہمىں نواز
آئے ہىں در پہ چاک گرىباں کئے ہوئے
سىنوں مىں اىک حشر بپا، لب سیے ہوئے
ہر آن ہے لپىٹ مىں اپنى لئے ہوئے
افکار کى تپش ہمىں احساس کا گداز
کٹ جائے گى کبھى نہ کبھى رات ہى تو ہے
اِک عارضى ىہ تلخىٔ حالات ہى تو ہے
تىرے سوا ہے کون ترى ذات ہى تو ہے
مشکل کشا، مجىبِ دعا، ربّ کارساز
خدمت مىں پىش کرتے ہىں صبرو رضا کے پھول
اہلِ وفا کى سارى خطاؤں کو جائىں بھول
جىسى بھى جس طرح کى بھى ہىں کىجئے قبول
مىرى دعائىں، مىرى عبادت، مرى نماز
پھىلائے جھولىاں ترے در پہ ہىں آئے آج
بندے ہىں ہم تو تىرے ہى، رکھ لے ہمارى لاج
تىرے ہى پاس ہے مرے ہر کرب کا علاج
چارہ گرى کا کوئى کرشمہ اے چارہ ساز
کىسا تفکرات کا پھىلا ہے سلسلہ
پىش آگىا ہے راہ مىں اک اور مرحلہ
ربّ کرىم شانِ کرىمى کا واسطہ
پہلى سى ڈال پھر وہى اِک نِگہ دلنواز
جاؤں کہاں کہ مىرا تو ہے اىک ہى خدا
تُو ہى طبىب و چارہ گر و مالکِ شفاء
ہونٹوں پہ مىرے آج تو ہے بس ىہى دعا
آقا مرے بخىر رہىں عمر ہو دراز

(صاحبزادى امۃ القدوس بیگم صاحبہ)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 4 اگست 2020

اگلا پڑھیں

Covid-19 عالمی اپڈیٹ 05 اگست 2020ء