• 5 اکتوبر, 2022

بعض واقفین نو مربیان کی حضور انور سے ملاقات کی دلربا داستانیں

مکرم حافظ طہ داؤد کے جذبات

• جامعہ احمدیہ یو کے کے فارغ التحصیل طالب علم حافظ طہ داؤد صاحب نے پیارے حضور انور حضرت خلیفۃ المسیح الخامس ایدہ اللہ تعالیٰ کے ساتھ اپنا ایمان افروز واقعہ بیان کرتے ہوئے کہا ’’اللہ تعالیٰ کے فضل و کرم سے مجھے جامعہ کے وقت کے دوران حضور انور سے ملاقات کے متعدد مواقع نصیب ہوئے۔ اسی طرح مجھے اجتماعات اور جلسوں میں بھی خدمات انجام دینے کا موقع ملا۔ ایک موقع پر مجھے مجلس خدام الاحمدیہ یوکے کےاجتماع میں پیارے حضور کو ظہرانہ دینے کا موقع ملا۔ اس دن حضور انور نے ہم (طلباء) سے جنرل نالج کے سوالات پوچھے۔ اس کے بعد آپ نے ہمیں اپنے جنرل نالج میں بہتری لانے کی ہدایت کی۔ سلاد تناول فرماتے ہوئے حضور انور نے ہم سے پوچھا کہ ’’ایک کھیرے میں کتنی کیلوریز ہوتی ہیں؟‘‘ جس کا شرمندگی کے ساتھ کسی نے جواب نہ دیا۔ لہذا حضور انور نے ہمیں آگاہ کیا کہ کھیرے میں کوئی کیلوریز نہیں ہوتیں۔ تاکہ ہم جتنا چاہیں کھا سکیں۔

• اسی طرح حضور انور نے بیت بازی کے حوالے سے ہم سے چند اور سوالات پوچھے۔ حضور نے ایک مصرعہ کا پہلا شعر پڑھا اور پوچھا ’’کون شعر مکمل کرے گا اور شاعر کا نام بھی بتائیں؟‘‘ ایک طالب علم نے جواب دیا ’’یہ شعر دوسرے خلیفہ حضرت مصلح موعود ؓنے لکھا ہے۔‘‘ میرے ذہن میں مصرعے کا صرف ایک چھوٹا سا حصہ یاد تھا اس لیے میں نے حضور انور سےعرض کیا: ’’مجھے صرف اتنا یاد ہے کہ یہ شعر اِن الفاظ پر ختم ہوتا ہے۔ حضور انور نے اپنے مبارک چہرے پر مسکراہٹ کے ساتھ فرمایا ’’صرف دو تین الفاظ رہ گئے تھے آپ ان کا بھی ذکر کر سکتے تھے۔‘‘ اس کے بعد حضور انور نے ہمیں مکمل شعر پڑھ کر سنایا۔

• حضور انور نے پھر مجھ سے دریافت کیا کہ ’’برطانیہ آنے سے پہلے آپ کس کلاس میں تھے؟‘‘ جس پر میں نے جواب دیا ’’میں 8 سال کا تھا۔’’ اپنے مبارک چہرے پر تبسم فرماتے ہوئے پیارے حضور نے مجھ سے پوچھا ’’پھر آپ نے اپنی اردو لکھائی کیسے بہتر کی؟‘‘ میں اس سوال سے حیران رہ گیا اور اس بات نے مجھے اس حقیقت پر غور کرنے پر مجبور کیا کہ حضور انور کے نام لکھے گئے تمام خطوط کو حضور انور بہت اچھی طرح سے پڑھتے ہیں اور معمولی تفصیلات پر بھی توجہ دی جاتی ہے۔ مجھے ایسا لگتا ہے کہ میں اُس خدائی جماعت کی خدمت کرنے والے خلافت کے بہت سے خوش نصیب بندوں میں سے ایک ہوں۔ اللہ ہمیں خلافت کی حقیقی برکات کا ادراک کرنے اور خلیفہ وقت کے ساتھ مضبوط رشتہ استوار کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین

مکرم عامر سعید کے جذبات

• ایک واقف نو عزیزم عامر سعید نے ہمیں بتایا کہ حضور انور نے ان کی کچھ کمزوریوں پر قابو پانے میں کس طرح مدد کی جو انہیں پریشان کر رہی تھیں۔ یہاں انہوں نے ہمیں بتایا کہ ’’جب میں جامعہ احمدیہ میں پڑھ رہا تھا مجھے ایک بار ایک ملاقات میں حضور انور سے اپنی کچھ خامیوں کا ذکر کرنے کا موقع ملا۔ جواب میں حضور انورنے بہت پیار سے کچھ مفصل نصیحتیں کیں تاکہ ہر ایک کو دور کرنے میں میری مدد کی جا سکے۔ بعد میں جب میں دفتر سے نکلنے کے لیے دروازے پر پہنچا تو آپ نے مجھے واپس بلایا اور فرمایا ’’آپ مجھے ہر دس دن بعد اپنے حالات سے آگاہ کرنے کے لیے ضرور لکھیں۔‘‘

میں نے ویسا ہی کیا جیسا کہ حضور انور نے مجھے ہدایت فرمائی اور اللہ کے فضل سے میں نے آہستہ آہستہ لیکن یقینی طور پر میں نے اپنے آپ کو ان پریشانیوں اور خامیوں پر قابو پایا جن کا میں نے پیارے حضور سے ذکر کیا تھا۔

مجھے اس سے اندازہ ہوا کہ حضور انور اپنے انتہائی مصروف شیڈول کے باوجود جامعہ احمدیہ کے طلباء کی پرورش کا کس حد تک خیال رکھتے ہیں۔ میں نے یہ بھی محسوس کیا کہ وہ انسان ہم پر کتنا مہربان اور پیار کرنے والا ہے اور وہ اپنا کتنا ذاتی وقت ہمیں دیتا ہے۔ یہ ذاتی طور پر میرے لیے بہت ایمان افروز تھا کیونکہ میں نے محسوس کیا کہ حضور انور کی دعائیں مجھے براہ راست فائدہ پہنچا رہی ہیں۔ میں دعا کرتا ہوں کہ اللہ تعالیٰ ہمیں ہمیشہ حضور انور کی دعاؤں اور محبتوں کے وصول کنندہ رہنے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین۔

مکرم معاذ احمد کے جذبات

• مربی سلسلہ مکرم معاذ احمد صاحب نے ہمارے ساتھ جو کچھ شیئر کیا وہ یہ ہے خدا تعالیٰ کے فضل و کرم سے جامعہ کے طلباء کو دورانِ مطالعہ متعدد بار خلیفہ وقت کے ساتھ ملاقاتیں کرنے کا بابرکت موقع ملتا ہے۔ میری جامعہ احمدیہ یوکے کی پہلی ملاقات جسے میں کبھی نہیں بھولوں گا۔اُس ملاقات سے چند دن پہلے میری دادی جان اچانک شدید بیمار ہوگئیں اور اس طرح انہیں ہسپتال میں داخل کروایا گیا۔ میں نے اس بارے میں حضور کو خط لکھا۔ مجھے ایک دو دن بعد جواب ملا جس میں حضور انور نے فرمایا کہ ’’اللہ فضل کرے گا‘‘۔ مجھے انہی دنوں میں ملاقات کرے کی سعادت نصیب ہوئی۔ میں نے اس کا ذکر حضور انور سے کیا تو انہوں نے جواب دیا کہ فکر نہ کرو اللہ تعالیٰ اپنی رحمتیں نازل فرمائے گا۔

ایک یا دو دن کے بعد میری دادی جان کی طبیعت اتنی بگڑ گئی کہ انہیں I C U یونٹ میں داخل کر دیا گیا اور سانس لینے میں دشواری ہو رہی تھی۔ جب انکے زندہ رہنے کے امکانات بہت کم نظر آرہے تھے تو اللہ تعالیٰ نے اپنی رحمتوں کی بارش کی اور دادی جان کو ایک اور زندگی عطا کی۔ میں یہ دیکھ کر حیران رہ گیا کہ اللہ تعالیٰ نے حضور انور کی دعاؤں کی طاقت سے دادی جان کو ایک نئی زندگی عطا فرمائی ہے اور حضور انور نے مجھے پہلے ہی اپنے ملاقات میں تسلی دے دی تھی کہ وہ بالکل ٹھیک ہو جائیں گی۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ خلافت واقعی ہم سب کے لیے ایک نعمت ہے اور ہمیں اپنے پیارے خلیفہ کے لیے دعا کرتے ہوئے اس نعمت سے فائدہ اٹھانا چاہیے۔

مکرم نصر احمد ارشد کے جذبات

• خاکسار کے بھائی نصر احمد ارشد صاحب جو کے اس وقت دفتر وکالت مال یوکے میں خدمت سر انجام دے رہے ہیں۔ انہوں نے جامعہ احمدیہ میں زخمی ہونے کے بعد حضور انور سے ملنے والی محبت کے بارے میں بتایا۔ کہ جامعہ کے درجہ رابعہ میں سالانہ کھیلوں کے دوران باسکٹ بال کے میچ میں میرا جبڑا ٹوٹ گیا۔ سرجری کے بعد میں پرائیویٹ سیکرٹری صاحب کے دفتر گیا اور دریافت کیا کہ کیا حضور انور نے کوئی دوا لینے کا مشورہ دیا ہے۔ پہنچنے پر مجھے سب سے پہلے بتایا گیا کہ حضور انور کو میری چوٹ کی اطلاع اس وقت دی گئی جب وہ جرمنی سے واپس تشریف لا رہے تھے اور انہوں نے تازہ ترین معلومات طلب کی تھیں۔ پرائیویٹ سیکرٹری صاحب نے مجھے بیٹھ کر انتظار کرنے کو کہا۔

انہوں نے کیا جب حضور انور کے دفتر میں جاؤں گا تب معلوم ہو گا اگر میری خوش قسمتی ہوئی تو حضور انور سے دوا یا کم از کم ایک نوٹ لے لوں گا کہ کیا لینا ہے۔ مجھے واضح طور پر یاد ہے کہ جمعرات کا دن تھا اور حضور انور یقیناً اپنے جمعہ کے خطبہ کی تیاری میں مصروف تھے۔ میرے انتظار میں وقت گزرتا گیا۔ ملاقات کرنے والا پہلا خاندان میرے پاس آکر بیٹھ گیا۔ میں نے حضور انور کے دفتر کے باہر لگے ہوئے لائٹ بلب کی روشنی کو دیکھا جیسے وہ اچانک چمکتی ہے۔ حضور نے پرائیویٹ سیکرٹری صاحب کو بلایا تھا۔ تھوڑی دیر بعد دروازہ کھلا اور کہا ’’نصر! حضور آپ کو بلا رہے ہیں‘‘۔ میں جم گیا۔ گویا سانس لینا یا چلنا بھول گیا ہوں۔ مجھے یاد ہے کہ پرائیویٹ سیکرٹری صاحب نے مجھے جانے کے لیے ہلکا سا دھکا دیا تھا۔

اندر داخل ہوتے ہی مجھے یاد آیا کہ حضور انور دروازے کی طرف منہ کر کے گویا انتظار کر رہے تھے۔ ’’تم ہمیشہ اپنے آپ کو زخمی کرنے کا انتظام کرتے ہو اور پھر میرے پاس آتے ہو!‘‘ حضور انور نے مسکراتے ہوئے کہا. ’’آپ کے لیے مزید کوئی گیم نہیں‘‘ حضور نے مجھ سے میری چوٹ سرجری اور کیا ہونے والا ہے کے بارے میں سوالات پوچھے۔ میں نے حضور انور کو بتایا کہ ڈاکٹروں نے مجھے بتایا ہے کہ مجھے اپنے جبڑے میں چار سے چھہ ہفتوں تک پیچ رکھنا پڑے گا۔ لیکن میں اپنے جبڑے میں بغیر کسی پیچ کے آپکے سامنے کھڑا ہوں۔ ڈاکٹروں نے مجھے بتایا کہ انہوں نے ایسا کیس پہلے کبھی نہیں دیکھا۔ مجھے یاد ہے کہ حضور انور نے مسکراتے ہوئے مجھ سے کہا تھا کہ ’’اچھا یہ بات ہے! پھر تو تمہاری پریشان بیوی کی دعائیں قبول ہو رہی ہیں۔‘‘ میں نے حضور سے عرض کی کہ میں نے ڈاکٹروں سے کہا ہے کہ میرا ایک خلیفہ ہے جس نے میرے لیے دعا کی ہے اور آج آپ جو کچھ دیکھ رہے ہیں اس کی اصل وجہ یہی ہے۔

میں حیران تھا کہ میرےروحانی بادشاہ نے وہ سب کچھ روک دیا جو وہ کر رہا تھا میرے جیسے نامعلوم اور غیر اہم شخص کے لیے جس کی کوئی اہمیت نہیں ہے۔ یہ وہ دن تھا جسے میں کبھی نہیں بھولوں گا۔ جب یہ سب کچھ ہو رہا تھا تو حضور انور نے تیزی سے کرسی پر بیٹھ کر ہومیوپیتھی کی الماری کی طرف رخ کیا اور کچھ دوائی نکال کر مجھے عنائت فرمائی۔ خاکسار دفتر سے نکلا تو لالہ ناصر سعید صاحب مرحوم دروازے پر پہرہ دے رہے تھے۔ میں مضبوط رہنے کی خواہش کے باوجود انکی بانہوں میں گر پڑا میری آنکھیں سوجی ہوئی تھیں۔ ایسا لگا جیسے خلیفہ وقت میرا انتظار کر رہیں ہوں۔ وہ تمام لوگوں میں مصروف ترین ہے لیکن پھر بھی وہ بیٹھا میری طرف ایسے دیکھتا رہا جیسے میں اس کی فکر کا مرکز ہوں۔ اس سے مجھے یہ احساس ہوا کہ حضور انور واقعی کسی کے دکھ اور درد کو لے کر سکون میں بدل دیتے ہیں اور ان کے ایمان کو مضبوط کرتے ہیں۔ ہم کتنے خوش نصیب ہیں کہ اس دور میں ہمارا ایک خلیفہ ہے!

(مرسلہ: فرخ احمد ارشد۔ لندن)

پچھلا پڑھیں

صحابہ رسولؐ اور ان کے بچپن نیز ان کی فدائیت کے واقعات

اگلا پڑھیں

الفضل آن لائن 9 اگست 2022