• 25 مئی, 2020

غزل

دل میں اب تک غبار سا کچھ ہے
آئینہ داغدار سا کچھ ہے

ٹوٹ کر میں بکھر گیا ہوتا
جانے کیا اعتبار سا کچھ ہے

گو قیامت ابھی نہیں آئی
ہر طرف انتشار سا کچھ ہے

گو نہ آنے پہ ہے مصر لیکن
کیوں ترا انتظار سا کچھ ہے

کچھ اسے بھی ہے ناز قامت پر
کچھ یہ دل بھی نثار سا کچھ ہے

آنکھ بھی اشک اشک ہے ناصر
دل بھی کچھ دلفگار سا کچھ ہے

(تنویراحمد ناصر۔قادیان)

پچھلا پڑھیں

تم

اگلا پڑھیں

ریَّان دروازہ