• 3 جولائی, 2020

صدائے بشیر

اپنا غمخوار مجھ کو جان اے دوست
میرا کہنا کبھی تو مان اے دوست
درد دل سے کہوں گا جو میں کہوں
لغو اس کو کبھی نہ جان اے دوست
ورلی دنیا سے مت لگا تو دل
چند روزہ ہے یہ جہان اے دوست
رکھ تو یادِ خدا کہ پیری میں
تجھ کو رکھے گی یہ جوان اے دوست
گر خدا کی طرف جھکے گا تو
وہ بھی خود ہو گا مہربان اے دوست
اس سے نکلیں گے بے بہا موتی
ایسی اسلام کی ہے کان اے دوست
زہرِ قاتل ہے ایک بدظنی
ہو کبھی بھی نہ بدگمان اے دوست
گالیاں سن کے ایسا ہو خاموش
گویا منہ میں نہیں زبان اے دوست
دین سے تو ہوا ہے غافل کیوں
اس پہ لگتا نہیں لگان اے دوست
کر لے جو کچھ کہ ہو سکے تجھ سے
تیرے سر پہ ہے امتحان اے دوست
دین سے جو تجھے کرے غافل
کہنا اس کا کبھی نہ مان اے دوست
لوٹ لے دین کا خزانہ تو
کیونکہ غافل ہے سب جہان اے دوست
تجھ کو رکھنا ہے گر نشان اپنا
خود مٹا اپنا تو نشان اے دوست
غم اٹھانے پڑیں گے گر رہنا
چاہتا ہے تو شادمان اے دوست
اپنے دل میں جگہ خدا کو دے
تاکہ جنت میں ہو مکان اے دوست
چاہتا ہے اگر کہ شان بڑھے
چھوڑ دے اپنی آن بان اے دوست
کھانے پینے میں رہ نہ تو کہ نجات
تجھ کو دیں گے نہ قُوْت و نان اے دوست
تجھ پہ اللہ اپنا رحم کرے
اور ہو تجھ پہ مہربان اے دوست
دل میں کر گیا ہے گھر احمدؑ
کیا ہے سادہ تیرا بیان اے دوست
میں یہ کرتا دعا ہوں بالآخر
تیرا جنت میں ہو مکان اے دوست

(الحکم 7 مئی 1918ء)

پچھلا پڑھیں

الفضل آن لائن 26 جون 2020

اگلا پڑھیں

Covid-19 عالمی اپڈیٹ 27 جون 2020ء