• 4 فروری, 2023

خادم ترے اہلِ زمیں تُو عبدِ شاہِ آسماں

ہیں تیرے آگے دم بخود کیا معترض کیا نکتہ چیں
اے نکتہ جُو اے نکتہ ور اے نکتہ داں اے نکتہ بیں
ہے ماہِ کامل ضَو فشاں تجھ سے فقط، تیرا رہیں
اے ماہ رُخ اے مہ لقا اے ماہ چشم اے مہ جبیں
پل بھر نہ تجھ بن دل لگے چاہت نہ کوئی دل لگی
اے دلربا اے دل ستاں اے دلبرا اے دلنشیں
نازاں ترے اوصاف پر سب اہلِ فن، خوش وصف سب
اے خوش نگار اے خوش بیاں اے خوش ادا اے خوش تریں
خادم ترے اہلِ زمیں تُو عبدِ شاہِ آسماں
اے شاہِِ شرق اے شاہِ غرب اے شہ زماں اے شاہِ دیں
جنت مری تیرا ہی در، یاں ہی رہوں مر کے بھی مَیں
اے وجہِ خلد اے رشکِ خلد اے برتر از خلدِ بریں
سب فاتحیں کو کر گئی مفتوح تیری اک نظر
اے فتح مند اے فتح بخش اے فتح گر، فتحِ مبیں

(م م محمود ؔ)

پچھلا پڑھیں

نطم

اگلا پڑھیں

عشق جب بھی کیا والہانہ کیا