• 8 اگست, 2022

حضرت خلیفۃ المسیح الاوّلؓ کی الفضل کے لئے رہنمائی

الفضل کے پہلے پرچہ میں حضرت خلیفۃ المسیح الاولؓ کا تازہ خطبہ جمعہ 13 جون 1913ء درج کیا گیا اور حضور کی راہنمائی اور دعائیں ہمیشہ اخبار کو میسر رہیں۔
حضرت خلیفۃ المسیح الاولؓ الفضل بڑی دلچسپی سے ملاحظہ فرماتے تھے اور ضروری ہدایات دیتے تھے۔ چنانچہ الفضل میں قادیان کی خبروں کے تحت لکھا ہے۔
’’حضور اخبار الفضل کو بڑے شوق سے مطالعہ فرماتے ہیں۔‘‘

(الفضل 8؍ اکتوبر 1913ء ص1)

حضرت خلیفۃ المسیح الاولؓ نے الفضل کے پہلے شمارہ میں ایک خاص مضمون ’’اسلامی اخبارات کے لئے دستورالعمل‘‘ بھی تحریر فرمایا۔
حضور کی جو راہنمائی الفضل کو میسر تھی اس کے متعلق ادارہ الفضل لکھتا ہے:۔
’’ان (قادیان سے نکلنے والے اخبارات) سے اگر کوئی غلطی سرزد ہوتی ہے تو خلیفۃ المسیح فوراً اس پر نوٹس لیتے ہیں۔ کیونکہ ہر ایک اخبار آپ کی خدمت اقدس میں پیش کیا جاتا ہے۔ الفضل کا اجرا اس غرض سے بھی ہوا تھا کہ جب کوئی امر من الخوف والامن پیش آئے تو خلیفۃ المسیح کی زبان بن کر گائیڈ کرنے کے لئے ایک اخبار ضروری چاہئے۔ یہی وجہ ہے کہ اس نے جب کوئی مضمون لکھا جس میں جماعت کو کسی خاص روش پر چلنے کی تاکید ہو تو خلیفۃ المسیح کو دکھا کر اور ان سے تصدیق لکھوا کر شائع کیا۔‘‘

(الفضل 3 ستمبر 1913ء ص9)

اس ضمن میں ایک احمدی کا خواب بھی بہت ایمان افروز ہے۔
مولوی میر اسحق علی صاحب احمدی سررشتہ دار عدالت گدوال (حیدر آباد دکن) تحریر فرماتے ہیں کہ میں حضرت خلیفہ اول کی صحت و عافیت اور احمدی بیماروں کی شفایابی کے لئے دعا کرکے سویا تھا خواب میں حضرت خلیفہ اولؓ نے الفضل خریدنے کی تاکیدی ہدایت فرمائی اور روپے خود اپنی جیب سے نکال کر دیئے۔

(الفضل 23 دسمبر 1915ء ص2)

پچھلا پڑھیں

روزنامہ ہونے پر حضرت مصلح موعودؓ کا پیغام

اگلا پڑھیں

یثرب اور مدینہ