• 7 اگست, 2020

اوصافِ قرآن مجید

نور فرقاں ہے جو سب نوروں سے اَجلیٰ نکلا
پاک وہ جس سے یہ انوار کا دریا نکلا
حق کی توحید کا مرجھا ہی چلا تھا پودا
ناگہاں غیب سے یہ چشمہ اصفیٰ نکلا
یا الٰہی تیرا فرقاں ہے کہ اک عالَم ہے
جو ضروری تھا وہ سب اس میں مہیا نکلا
سب جہاں چھان چکے ساری دکانیں دیکھیں
مئے عرفان کا یہی ایک ہی شیشہ نکلا
کس سے اس نور کی ممکن ہو جہاں میں تشبیہ
وہ تو ہر بات میں ہر وصف میں یکتا نکلا
پہلے سمجھے تھے کہ موسیٰ کا عصا ہے فرقاں
پھر جو سوچا تو ہر اک لفظ مسیحا نکلا
ہے قصور اپنا ہی اندھوں کا وگرنہ وہ نور
ایسا چمکا ہے کہ صد نَیَّرِ بیضا نکلا
زندگی ایسوں کی کیا خاک ہے اس دنیا میں
جن کا اس نور کے ہوتے بھی دل اَعمیٰ نکلا

(براہین احمدیہ حصہ سوم صفحہ 274 مطبوعہ 1882ء)

Light of the Furqan

The light of the Furqan Is the brightest of all lights;
Holy is He from Whom This river of spiritual light issued forth.
The tree of faith in divine unity Was about to wither away;
All of a sudden, this pure spring Gushed forth from the unseen.
O Allah! Your Furqan is a universe in itself;
It contains everything that was ever needed.
We searched the whole world, We rummaged through all the shops;
But we found only this one goblet Containing the true knowledge of the Divine.
The similitude of this light cannot be found In the whole wide world;
For it is unique in every thing, And matchless in every quality.
At first we thought that the Furqan Is like the rod of Moses
Then when we reflected further, And found every word to be a Messiah.
Blind as they are, It is their own fault; Otherwise this light has shone As brightly as a hundred suns.
How pathetic is the life Of the people in this world,
Whose hearts remained blind Even in the presence of this Light.

پچھلا پڑھیں

Covid-19 عالمی اپڈیٹ 19 جولائی 2020ء

اگلا پڑھیں

Covid-19 عالمی اپڈیٹ 20 جولائی 2020ء